About the author

5 Comments

  1. 1

    Kamran Rafi

    نہ یہ اہل مذہب نے پہلے طے کیاکہ قانون ہاتھ میں لینا ہے یا نہیں نہ اب کریں گےاور نہ ہی عوام پوچھ کر قانون ہاتھ میں لیتے ہیں۔ جب تک ملک کا ‘نظم اجتماعی’ رنجیت سنگھ کی طرح ‘یک چشمی’ انصاف کرتا رہے گا لوگ قانون ہاتھ میں لیتے رہیں گے- محترم غامدی صاحب جیسے دانشور اور محترمی خورشید صاحب جیسے صحافی جب صرف ‘بیچاری ممتاز عوام’ سے قانون کی یک طرفہ پاسداری کا مطالبہ فرماتے ہیں اور حکمرانوں اور عدالتوں کے ‘تاثیری حربے’ نظر انداز کر دیتے ہیں تو یک رخی صحافت اور یک نظری دانشوری پیدا ہوتی ہے جو نہ تو انصاف کے قرین ہے نہ عوام میں مقبول ہو سکتی ہے۔

    Reply
  2. 2

    Umair

    Mumtaz Qadri Qatil hy to Hazrat Umar ko kya kaho ge
    https://m.facebook.com/story.php?story_fbid=1567687946878125&id=100009108053117
    ye dekhen or jawab den column nigar bhai.

    Reply
  3. 3

    Namaloom

    Mazhabi peshawa aur so-called ahle mazhab to kab ka faislay kar chukkay..baqol Munir Miazi..”wailay lang gaye toba walay..ratan hoke bharan diya nahi”…ya phir baqol Akhtar Hussain Jafary…”abb nahi hotin duaen mustajab..abb kisi abjad se zindan-e-sitam khulte nahi…JO HO CHUKA USS KA RONA KIA!!!

    Reply
  4. 4

    Waqar Nabi

    main ziada para likha nai hoon, par mohtram kalam nigaar saab main ap sy just aik baat poochna chahon ga k agr main tumari maa behn ko gali doon ya un k baary main baqwaas karo to tum usi time mera garybaan pakro gy ya police station ja k FIR katwaon gy?
    HAZOOR ﷺ ki hadess sharif hy k tab tak tumara iman nai mukamal hota jab tak MAIN ﷺ tumain tumari oulad maal jaab sy aziz na ho jaon.
    to tu b ye baat kaan khol k sun lay our apni bygairat khakoomat ko b suna dy k gustakh-e-NABI ﷺ ki aik saza, sar tan sy juda , sar tan sy juda.
    our INSHALLAH qyamat tak hazaroon mumtaz qadri paida hoty rhy hain our aisy salman taseer jaison k sar tan sy juda karty rahain gy.

    Reply
  5. 5

    Syed Abu Bakar Ammar

    تاریخ نے دیکھا کہ مذہبی رہنماوں نے عوام کو ایٹم بم نہیں بننے دیا اس کے باوجود بھی میڈیا نے ان کو نہیں سراہا، ناصرف سنی ءلماء بلکہ خود غازی ممتاز قادری شہید بھی ذاتی عدالت لگانے اور خود سزا دینے کا شوقین نہیں تھا لیکن جہاں گورنر کو استثناء دینے کا کالا قانون ہو وہاں کسے وکیل کریں کس سے منصفی چاہیں اگر گورنر کو قانون سے استثاء نہ بھی ہوتا تو بھی کس کی جرآت تھی گورنر کو گرفتار کرتا یا اس پہ ایف آئی آر کاٹتا۔ 7 اکتوبر 2009کو عالمی تنظیم اہلسنت کے نائب امیر صاحبزادہ سید مختار اشرف رضوی سرپرست اعلیٰ جامعہ حزب الاحناف لاہور نے میری اور لاہور کے درجنوں علماء کی معیت میں تھانہ سول لائن لاہور میں سلمان تاثیر کے بیان کے خلاف ’’ایف آئی آر‘‘درج کرنے کی درخواست جمع کروائی اور چند دن بعدعالمی تنظیم اہلسنت کے زیر اہتمام داتا دربار لاہور سے وزیر اعلیٰ ہاؤس تک احتجاجی جلوس نکالا گیا اور وزیر اعلیٰ ہاؤس کے سامنے دھرنا دے کر سلمان تاثیر کے خلاف قانونی کاروائی کا مطالبہ کیا گیالیکن افسوس کہ مرکزی اور صوبائی حکومت نے کوئی کارروائی نہ کی۔ اہل خانہ کے مطابق خود ممتاز قادری دو تھانوں میں گئے لیکن انہیں جواب ملا کہ آپ تو قانون جانتے ہیں گورنر کو استثناء حاصل ہے۔

    Reply

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

error: برائے مہربانی اسے شیئر کیجئے۔۔۔!! شکریہ