About the author

2 Comments

  1. 1

    Syed Farooq

    koi b kisi bhi waqt uth kr ehl_e Bait ki shaan main
    kuch bhi bol kr mafi mang le. Beshak Hisab kitab karny wali Allah ki
    zaat hai. hum nacheez yeh haq nahin rakhty, lekin agr ek bar kisi ka
    munh band nahin kia jayega ulta uski himayet ki jayegi k apni mafi mang
    li ap maaf hen. ab ap bilkul be qasur hen, to boht se esy log janam len
    gy, jo kch b bol kr mafi maang len gy,yeh ek trend ban jayega or ahista
    ahista yeh mazhabi azadi main convert ho jayega. agr koi b shakhs esy
    kalmat bolta hai ya kuch bhi kehta hai even wo mafi mangy jo mrzi kry,
    state ko chahieye k usko saza zarur de, har mujrim jurm krny k bad
    mafiyan mangta hai jb wo pkra jata hai, to hum un logon ko q nai maf kr
    dete unky against lakhon rupee kharch kr k case q larty hen. chor ny
    mafi mang li cheezain wapis kr di to phir bhi hum usy maaf q nai krty q
    usko jail main bnd kr k saza dete hen? kisi ko is tarha bazar main marny
    ka koi haq nai rkhta, lekin state ko action lena chahieye, punish krna
    chahieye inquiry krni chahiye

    Reply
  2. 2

    Zahid Ali Khan

    میں عوام کو اس بات کا مورد الزام نہیں ٹھہراؤں گا وہ اپنے علاوہ ہر دوسرے میں خامیاں تلاش کر رہے ہیں اور ایک دوسرے کے قتل کے درپے ہیں بلکہ میرے نزدیک معاشرے پر اثر انداز ہونے والے کم از کم دو بڑے طبقے اس کے ذمہ دار ہیں ایک وہ علماء دین جو جن کا آپ نے اپنے کالم میں تزکرہ کیا ہے کہ وہ سرکار کو بھی ناراض نہیں کرنا چاہتے اور اور عوام کو بھی نہیں کہ جن سے ان کی روزی روٹی چل رہی ہے کہ سلمان تاثیر کا قتل غلط بھی تھا اور قاتل کو ثواب بھی پہنچ گیا ۔۔۔۔ اور دوسرے وہ لکھاری جو خودملامتی اور زہر آلود تحریروں کو اپنی وجئہ شہرت سمجھ کر دانشوری کے اس مقام پر پہچ چکے ہیں کہ انہیں اپنے علاوہ سارا معاشرہ غلط عقیدوں اور جرائم میں ڈوبا ہوا نظر آتا ہے۔۔

    Reply

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

error: برائے مہربانی اسے شیئر کیجئے۔۔۔!! شکریہ