About the author

4 Comments

  1. 1

    Zaman Zeb

    Dehrie ki sabse bari kam aklee yahi hoti hai ke wo is chez pe gor nahi karta ke science bhi Khudda ki hee takhleeq hai hum tou bas ussmein tarakee hee kie jarahe hain, aapka kalam kamaal hai khusoosi iske likhne ka andaz aesa hai ke dehria bhi bura nahi maane ga.

    Reply
  2. 2

    Ahtsham Ul Haq

    great writing….. prh k pta chla k ma ne abe 4 kitabien he prhi hian… abe 8 phr 16 phr 32 prhna baki hian

    Reply
  3. 3

    Rukhshan Meer

    Excellent article worth reading and sharing. I agree with your views

    Reply
  4. 4

    Rao Shafique Ahmad

    بہت اچھا مضمون ہے لیکن عجیب بات ہے کہ دہریہ تو چار کتابیں پڑھ کر بنتا یا ہو جاتا ہے لیکن مزہبی انتہاپسندی تو بغیر پڑھے یا سن سنا کر پیدا ہو جاتی ہے اس کا کیا ؟ دہریہ دوسروں کے عقائد کا مزاق اڑا سکتا ہے قتل بہرحال نہیں کرتا – ابھی کل کی بات ہے ایک احمدی ڈاکٹر کو اس کے گھر کے سامتے سزائے موت بوجہ دے دی گئی اور کے اسلامی پیج پر اس موت کا جشن منایا گیا – دہریئے کا سفر تو دائرہ کا سفر ہو سکتا لیکن مذہبی انتہا پسند کا سفرقتال کے گرد ہی گھومے گا دہریئے مولوی سے نکاح پڑھواتے وغیرہ کا طعنہ بنتا نہیں کیونکہ یہ مذہبی سے زیارہ سماجی اور ثقافتی عمل ہے – دہریہ انسانی خون بہانے والوں سے بہرحال بہتر ہے –

    Reply

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

error: برائے مہربانی اسے شیئر کیجئے۔۔۔!! شکریہ