گوادر پورٹ، فری زون سے متعلق مزید خوشخبریاں

گوادر بندرگارہ سی پیک کے تحت انتہائی اہم اور بڑا منصوبہ ہے۔ گوادر بندرگاہ کافی حد تک فعال ہوگیاہے اور اس سے منسلک دیگر منصوبوں پر تیزی سے کام جاری ہے۔ جن کی تکمیل سے صوبے کے ہزاروں لوگوں کو ملازمتیں مہیا ہوں گی جس سے ان کی زندگی میں خوشحالی آئیگی ۔ پورا علاقہ ترقی کرے گا۔ بلوچستان کی پسماندگی دور ہوگی اور ترقی کے نئے مواقع میسر آئیں گے ۔ اس کے ساتھ ساتھ چونکہ اس بندرگاہ کی اہمیت پورے ملک اور خطے کیلئے ہے اسلئے یہ بندرگاہ پورے ملک اور خطے کی ترقی اور خوشحالی میں اہم کردار اداکرے گا۔

ملک کے اہم علاقوں سے دور ہونے کی وجہ سے گوادر کے حوالے سے رپورٹنگ بہت کم ہوتی ہے اور خبریں بھی کم آتی ہیں ویسے بھی ہمارے ملک میں مثبت خبرورں کو اجاگر کرنے کا رجحان کم ہے ۔ لیکن یہ ایک حقیقت ہے کہ گوادر پر تیزی سے کام جاری ہے ۔ گوادر میں چینی سرمایہ کاری کی وجہ سے کافی منصوبے مکمل ہو چکے ہیں کچھ جلد تکمیل کو پہنچنے والے ہیں اور مزید کیلئے منصوبہ بندی کی جارہی ہے ۔ مستقبل میں اس اہم منصوبے کے بارے میں ہمیں مزید خوشخبریاں ملیں گی۔
اس حوالے سےچین پاکستان اقتصادری راہداری اتھارٹی کے چئیرمین عاصم سلیم باجوہ نے حالیہ دنوں ایک پریس کانفرنس کاا نعقاد کیا جس میں اس ہم منصوبے کی موجودہ صورتحال اور مستقبل کے بارے میں کافی خوشخبریاں سنائی گئیں۔

چین پاکستان اکنامک کوریڈور (سی پی ای سی) اتھارٹی کے چیئرمین لیفٹیننٹ جنرل (ر) عاصم سلیم باجوہ نے کہا کہ مکمل طور پر آپریشنل ہونے کے بعد گوادر بندرگاہ اور گوادر فری زون سے سالانہ 10 بلین ڈالر کی اقتصادی سرگرمیاں پیدا ہوں گی۔ انہوں نے کہا کہ ، "گوادر فری زون کی تکمیل کے فورا، بعد ، بہت ساری مینوفیکچرنگ اور ٹریڈنگ سرگرمیاں شروع ہوجائیں گی ، کارگو حرکت میں آئیں گے ، اور ٹرانسمیشن کی سرگرمیاں بڑھ جائیں گی۔انہوں نے کہا ، "ہم گوادر میں ترقیاتی کاموں کی نگرانی جاری رکھیں گے جب تک کہ تمام منصوبے مکمل طور پر فعال نہیں ہوجاتے۔ عاصم باجوہ نے کہا کہ اس بندرگاہ کا بنیادی ڈھانچہ چائنا پورٹ ہولڈنگ کمپنی نے تقریبا تین سو ملین ڈالر کی لاگت سے مکمل کیاہے اور اس کی چاروں برت مکمل طور پر چل رہی ہیں۔

انہوں نے کہا کہ پچھلے چند مہینوں کے دوران ، بندرگاہ پر سڑسٹھ ہزار میٹرک ٹن سے زیادہ کارگوسامان کو سنبھالا گیا ہے، جس میں زیادہ تر سامان افغانستان ٹرانزٹ تجارتی معاہدے کے تحت تھا ، جو بعد میں افغانستان منتقل کیا گیا تھا۔ عاصم باجوہ نے بتایا کہ بندرگاہ میں سنبھالنے کی گنجائش موجود ہے اور سرمایہ کاروں اور تاجروں کی سہولت کے لئے کسٹم کا نظام بھی موجود ہے۔

انہوں نے کہا ، "اب ہمارا پورا زور بندرگاہ ٹریفک میں اضافہ کرنا ہے جس کے لئے ہم شہر میں اپنے دفاتر قائم کرنے کے لئے لاجسٹک کمپنیوں کی تلاش کر رہے ہیں۔ گوادر پورٹ فری زون کے حوالے سے ، عاصم باجوہ نے کہا کہ 60 ایکڑ اراضی پر پھیلے اس کا پہلا مرحلہ پہلے ہی مکمل ہوچکا ہے ، جس میں 47 انٹرپرائزز رجسٹرڈ ہیں۔ چھ فیکٹریاں مکمل ہوچکی ہیں ، ان میں سے تین اب مکمل طور پر چل رہی ہیں ، جبکہ چھ دیگر فیکٹریوں کا کام جاری ہے۔ انہوں نے کہا ، پچھلے تین سالوں سے ، بندرگاہ اور آزاد زون دونوں نے تقریبا 1200 براہ راست ملازمتیں پیدا کیں جبکہ بارہ ہزار مزید افراد کو معاون انفراسٹرکچر کی تعمیر کے لئے ملازم رکھا گیا ہے۔ عاصم باجوہ نے کہا کہ گوادر پورٹ فری زون کا دوسرا مرحلہ دوہزار دو سو اکیس ایکڑ اراضی پر محیط ہوگا جس کا جلد افتتاح کیا جائے گا۔

انہوں نے کہا کہ چائنہ پورٹ ہولڈنگ کمپنی نے دوسرے مرحلے کے لئے پہلے ہی ایک سرمایہ کار کو کھڑا کیا ہے ، جس کے لئے تقریبا، سولہ سو ایکڑ اراضی کی ضرورت ہوگی۔ سرمایہ کار نے واحد صنعت میں 3 ارب ڈالر کی براہ راست سرمایہ کاری کا وعدہ کیا ہے جس سے تقریبا تیس ہزار ملازمتیں پیدا ہوں گی۔

عاصم باجوہ نے نشاندہی کی کہ ایسٹ بے ایکسپریس وے کارگو کو براہ راست بندرگاہ سے ایم ۔۸ تک پہنچائے گی جہاں سے کراچی اور ملک کے باقی حصوں تک رسائی آسان ہے۔ ایکسپریس وے پر تقریبا 94 فیصد کام مکمل ہوچکا ہے اور ستمبر میں اس کے افتتاح کی امید ہے۔

اسی طرح گوادر ائیرپورٹ پر بھی کام تیزرفتاری سے جاری ہے جب کہ شہر میں فنی اور پیشہ ورانہ انسٹی ٹیوٹ بھی اکتوبر میں مکمل ہوجائیں گے۔ انہوں نے کہا کہ اس علاقے میں زیادہ سے زیادہ ملازمت کے مواقع پیدا کیے جائیں گے ، جس میں مقامی نوجوانوں کو مہارت کی تربیت دے کر صلاحیتوں کو بڑھایا جائے گا۔ سی پی ای سی اتھارٹی کے چیئرمین نے بتایا کہ گوادر شہر میں 150 بستروں پر مشتمل ایک اسپتال زیر تعمیر ہے۔ انہوں نے کہا کہ گوادر سٹی کے ماسٹر پلان کی بھی منظوری دے دی گئی ہے ، اور اب یہ عمل درآمد کے مرحلے میں ہے۔

گوادر بندرگاہ کے بارے میں تمام غلط فہمیوں کو دور کرتے ہوئے ، انہوں نے کہا کہ اب یہ حقیقت بن چکی ہے ، بہت سارے ترقیاتی کام مکمل ہوچکے ہیں ، جبکہ سامان کو سنبھالنے کا کام جاری ہے۔ انہوں نے کہا کہ سی پیک کے تحت زراعت کے شعبے کی ترقی توجہ کا ایک اہم شعبہ ہے۔ اس سلسلے میں انہوں نے میرانی اور صوبے کے دیگر علاقوں سے زراعت کی کمیونٹی کے ساتھ ایک ملاقات کی۔ چھ چینی کمپنیاں بتیس ہزار پانچ سو ایکڑ اراضی کے لیز معاہدوں پر دستخط کرنے کے لئے تیار ہیں ، جس پر وہ کارپوریٹ فارمنگ کا ایک انوکھا ماڈل تیار کریں گے۔ انہوں نے مزید کہا کہ یہ بلوچستان میں پہلا زرعی ماڈل فارم ہوگا کیونکہ خیبر پختونخوا اور سندھ کے صوبوں میں بھی اسی طرح کے ماڈل چلائے جارہے ہیں۔ ایسٹ بے ایکسپریس وے کی ترقی کے بعد ماہی گیروں کے تحفظات کے بارے میں ، انہوں نے کہا کہ ان کے خدشات کو دور کرنے کے لئے تین پل زیر تعمیر ہیں۔

ان تفصیلات سے گوادر کے مختلف منصوبوں پر تیزی سے پیش رفت کا اندازہ ہوتاہے ۔بلاشبہ گوادر معاشی سرگرمیوں کا حب بنتا جارہاہے ان معاشی سرگرمیوں سے پورے خطے کو فائدہ ہوگا ۔ خطے کو عوام کی زندگی میں خوشحالی سے ان کا معیار زندگی بلند ہوگا ۔ یہی بنی نوع انسان کے ہم نصیب معاشرے کی تعبیر ہے۔

Facebook
Twitter
LinkedIn
Print
Email
WhatsApp

Never miss any important news. Subscribe to our newsletter.

آئی بی سی فیس بک پرفالو کریں

تجزیے و تبصرے