سیلاب سے نمٹتی خواتین اور ماہواری کی مشکلات

تونسہ شریف کے علاقہ ڈگر والی کی رہائشی 65 سالہ صغراں مائی سیلاب کے دوران اپنی 27 سالہ جسمانی معذور بیٹی کی ماہواری کے دنوں میں ذیادہ پریشان ہے کہ سیلاب جہاں اس کا گھر اور مال و متاع بہا کر لے گیا وہاں بنیادی ضروریات سمیت معذور بیٹی کی ماہواری کے موقع پر کوئی ایسا متبادل انتظام نہ ہونے کی وجہ سے وہ اپنی بیٹی کے ان مشکل 7 دنوں میں صرف کپڑے تبدیل کر سکتی تھی وہ بھی صرف ایک ہی جوڑا محفوظ کر پائی تھی ۔

معذور بیٹی ماہواری کے دوران کسمپرسی کی حالت میں پڑی رہتی تھی۔ جس کی حالت چھپانے کے لئے وہ اسے محفوظ ٹھکانے سے بھی باہر نہیں نکال سکتی تھی۔ صغراں مائی کہتی ہے کہ بارش ہو، سیلاب ہو یا کوئی آفت ہو اس پر تو بند باندھے جا سکتے ہیں تاہم عورتوں کی ماہواری، ان کی بے سروسامانی سیلاب اور بارش کا احساس نہیں کر سکتی اور مقررہ ایام میں شروع ہونا ہوتا ہے۔ غربت نے کبھی صرف کپڑا استعمال کرنے کے علاوہ سینٹری پیڈ خریدنے کی نہ تو سکت دی اور نہ ہی اس علاقہ میں کبھی استعمال کئے گئے۔

رواں برس موسم گرما میں آنے والے تباہ کن سیلاب نے پاکستان کے پسماندہ اور دشوار گزار علاقوں میں موجود خواتین کی صحت سے متعلق مشکلات میں مذید اضافہ کر دیا ان علاقوں کی خواتین پہلے سے ہی حیض سے متعلق صحت کے مسائل سے دو چار ہیں۔ قبائلی روایات اور معاشرتی دباؤ کا خوف مردوں اور خواتین کو اس مسئلے پر بات کرنے کو تیار نہیں کر سکا ہے۔

اب سال 2022 کے سیلاب نے لاکھوں افراد کو بے گھر کر دیا۔ خواتین اور بچوں کی بڑی تعداد بغیر کسی سہولت کے کھلے آسمان تلے ذندگی گزار رہے ہیں۔ ایسے حالات میں فاطمہ جسی ہزاروں خواتین کے پاس ماہواری کے لیے بنیادی ضرورت یعنی سینیٹری پیڈز دستیاب نہیں ہیں۔ چونکہ پاکستان ایک انتہائی پدرانہ اور قدامت پسند ملک ہے، اس لیے یہاں خواتین کی ماہواری کے بارے میں بات کرنا،اب بھی ایک سماجی ممنوع سمجھا جاتا ہے۔ اس سانحے کی وجہ سے، سیلاب زدہ تنظیموں نے اکثر سیلاب سے متاثرہ علاقوں میں خواتین میں ماہواری کی چیزیں تقسیم کرنے سے ذیادہ صرف خوراک کی ضرورت کو مدنظر رکھا گیا ہے۔

سیلاب زدہ علاقوں میں سردی کی آمد کے باوجود اب بھی 2 لاکھ کے قریب لوگ کیمپوں میں رہ رہے ہیں اور پردے کی سختی و قبائلی رویات کی وجہ سے خواتین کی زندگی ان کے ماہانہ چکر کے دوران مزید تکلیف دہ ہو جاتی ہے۔ بیت الخلاء، سینیٹری مصنوعات، خواتین ڈاکٹروں یا طبی کیمپوں کی کمی نے دیہی علاقوں کی نوجوان لڑکیوں اور خواتین میں صحت کے مسائل، خاص طور پر اندام نہانی کی بیماریاں پیدا کی ہیں۔ ماہواری کی مصنوعات کی عدم دستیابی خواتین کو پلاسٹک کے تھیلے، پتے، گیلے اخبار، گیلے چیتھڑے اور پرانے کپڑے استعمال کرنے پر مجبور کر رہی ہے۔

امدادی اداروں کی جانب سے اس غیر صحت مندانہ سرگرمی سیلاب زدہ علاقوں کی نشاندہی کی گئی تو یہ بحث بھی سننے میں آئی کہ کیا سینٹری پیڈز تقسیم ہونے چاہیئں؟، کیونکہ بہت سے لوگوں کا دعویٰ ہے کہ دیہی علاقوں کی خواتین انہیں استعمال کرنا نہیں جانتیں۔ امدادی اداروں کے کارکنان کا خیال ہے کہ اگر اس بات کو درست بھی مان لیا جائے تو پھر بھی سینیٹری پیڈ ضرور تقسیم ہونے چاہییں اور اس کے ساتھ ساتھ ان خواتین کی تربیت بھی ہونی چاہیے۔ چونکہ معاشرے میں اکثر ماہواری کو "شرم” سے جوڑا جاتا ہے آج کی دنیا میں بھی، پاکستان میں ماہواری کی صفائی کے بارے میں بات کرنا ممنوع ہے، آج کی دنیا میں بھی، پاکستان میں ماہواری کی صفائی کے بارے میں بات کرنا ممنوع ہے، جس کی وجہ سے نوجوان لڑکیوں اور خواتین جان لیوا بیماریوں کا شکار ہو سکتی ہیں۔ علاقے میں کام کرنے والی گائنا کالوجسٹ ڈاکٹر نجمہ حمید کے مطابق "بہت دکھ کی بات ہے کہ خواتین کو دوائیں دینا بہت منصفانہ ہو گا لیکن سینیٹری پیڈ نہیں،” حالانکہ ماہواری کی مصنوعات عیش و عشرت نہیں بلکہ بنیادی انسانی ضرورت ہیں، لیکن معاشرے میں لفظ "پیریڈز” کے زکر کو بے شرمی کی بات تصور کیا جاتا ہے۔ سینیٹری پیڈ خریدنا بھی ایک مشکل عمل ہے، کیونکہ جب دکانوں یا فارمیسی میں پیڈز خریدنے جائیں تو اس کو چھپانے کے لیے براؤن لفافہ دیا جاتا ہے۔ گویا یہ شرمناک چیز ہے۔

کسی بھی آفت کی صورت میں خواتین اور بچے سب سے زیادہ متاثر ہوتے ہیں۔ پاکستان جیسے ملک میں، جہاں خواتین کا کردار پہلے ہی بہت محدود ہے، خاص طور پر دیہی علاقوں میں، اس کے نتائج اور بھی المناک و تباہ کن ہیں۔ صنفی بنیاد پر تشدد بھی ایک اہم چیلنج ہے، کیونکہ بے گھر خواتین کو رات کے وقت بیت الخلا استعمال کرنے کے لیے اپنے خیموں سے نکلنے یا پانی، لکڑی یا راشن لانے جاتے وقت حملے کا زیادہ خطرہ ہوتا ہے۔ سندھ، خیبرپختونخوا اور بلوچستان صوبوں کے ساتھ جنوبی پنجاب کے سیلاب سے متاثرہ خواتین کے خلاف جنسی زیادتی اور ہراساں کیے جانے کے واقعات رپورٹ ہوئے ہیں۔ خواتین کو مالی طور پر کمزور کر دیا جاتا ہے، انہیں پردے کی وجہ سے امداد تک آسان رسائی نہیں دی جاتی ہے۔

خواتین ہیلتھ ورکرز یا ڈاکٹروں کی بھی کمی ہے، جبکہ روایت اصول خواتین کو مرد ہیلتھ ورکرز کے پاس جانے نہیں دیتے ہیں۔ اس سے بہت سی خواتین ایسے وقت میں صحت کی دیکھ بھال کے بغیر رہ جاتی ہیں جب ان کی ضرورت پہلے سے کہیں زیادہ ہے۔ اقوام متحدہ کے پاپولیشن فنڈ (یو این ایف پی اے) کے مطابق ستمبر میں پاکستان میں سیلاب سے متاثرہ 73 ہزار خواتین نے بچوں کو جنم دیا۔

ڈاکٹر عائشہ خلیل کے مطابق مہلک سیلاب کی وجہ سے سیلاب متاثرہ خواتین پیشاب کی نالی کے انفیکشن، تولیدی اور صحت کے بہت سے مسائل کا شکار ہیں۔ طبی سہولیات کے فقدان کی وجہ سے اسقاط حمل عروج پر ہے جبکہ کھڑا پانی، غیر صحت مند حالات اور ناقص صفائی کی وجہ سے خواتین کو ماہواری کے دوران انفیکشن اور دیگر پیچیدگیوں کا شدید خطرہ لاحق ہے۔ 80 لاکھ سے زائد پاکستانی خواتین کو ماہواری کی ناقص صفائی کی صورت میں سیلاب کی ہولناکیوں کا سامنا ہے۔ جس کے نتائج یقینی طور پر خواتین کے لئے تباہ کن ہو سکتے ہیں: تونسہ کے علاقہ ڈگروالی کی ایک خاتون نے بتایا کہ "ڈاکٹر نے مجھے اپنا بچہ دانی نکالنے کا مشورہ دیا کیونکہ یہ میرے جسم کے دوسرے حصوں کو بھی متاثر کر رہا ہے۔ ہم نے سیلاب میں سب کچھ کھو دیا ہے اور ہم ایسی کسی سرجری و علاج کے متحمل نہیں ہو سکتے ہیں”۔

پاکستان کا تعلیمی نظام بھی ماہواری کے بارے میں شرمندگی کی وجہ سے ذمہ دار ہے، کیونکہ مڈل اسکول کے بچوں کے لیے کوئی مناسب تعلیم یا آگاہی مہم یا پروگرام نہیں ہیں، جس عمر میں لڑکیوں کو عام طور پر ماہواری شروع ہوتی ہے۔ تقریباً نصف پاکستانی لڑکیاں حیض کے بارے میں کچھ نہیں جانتیں جب تک کہ وہ اپنے پہلے چکر کا تجربہ نہ کر لیں۔ چونکہ "ناپاکی” کا تصور ماہواری سے منسلک ہے، اس لیے 44 فیصد لڑکیوں کو گھر یا اسکول میں ماہواری سے متعلق بنیادی آگاہی یا حفظان صحت کے انتظام کی ہدایات نہیں ملتی ہیں۔ اتفاق سے نہیں، پاکستان میں 80 فیصد سے زیادہ لڑکیوں کے سکول چھوڑنے کی شرح ہے۔ مدت کے انتظام کے لیے تعلیم اور وسائل کی کمی کی وجہ سے، بہت سی لڑکیوں کے لیے ماہواری کے دوران اسکول جانا قابل عمل نہیں ہے۔ بدقسمتی سے، پاکستان میں، پہلی ماہواری کے آنے کا مطلب بچپن کا خاتمہ بھی ہے، جس کے نتیجے میں اکثر بچپن کی شادیاں ہوتی ہیں، یہ عمل دیہی علاقوں میں بہت عام ہے۔ پاکستان میں کم عمری کی شادی کی شرح دنیا میں چھٹے نمبر پر ہے اور جنوبی پنجاب کے قبائلی علاقے اس شرح میں سرفہرست ہیں۔

غربت سے نمٹنے کے لیے ایک اور اہم چیلنج سینیٹری مصنوعات کی زیادہ قیمت ہے۔ پیڈ کوئی عیش و آرام کی چیز نہیں ہے، پاکستان کی حکومت اس معاملے پر پاکستانی خواتین کو آسانی فراہم کرنے میں ناکام ہو چکی ہے، کیونکہ خاص طور پر سیلاب کے بعد غربت کو کنٹرول کرنے یا ختم کرنے کے لیے کوئی پالیسی یا اقدامات شروع نہیں کیے گئے۔ حامیوں کا کہنا ہے کہ ماہواری فطری ہے اور اس کی وجہ سے خواتین کو ماہواری سے متعلق مفت مصنوعات بنا کسی ٹیکس کے ملنی چاہئیں۔

سماجی تنظیم کی کارکن فادیہ کاشف نے کہا کہ سینیٹری پراڈکٹس پر موجودہ ٹیکس غربت اور ماہواری کی ناقص حفظان صحت کے مسائل کو بڑھاتے ہیں، خواتین کے آرام، وقار اور صحت کو چھین رہے ہیں۔ دنیا بھر میں سرگرم کارکن طویل عرصے سے یہ استدلال کرتے رہے ہیں کہ ایسی مصنوعات پر ٹیکس لگانا جو خواتین کی بنیادی ضرورت ہے انسانی حقوق کی خلاف ورزی ہے۔ تاہم، پاکستان جیسے ملک میں "بلڈ ٹیکس” یا "ڈونٹ ٹیکس مائی پیریڈ” جیسی مہموں کو زیادہ پذیرائی نہیں ملی، کیونکہ عوام، پالیسی ساز اور خاص طور پر، حکومت کبھی بھی غربت کی نظر میں ماہواری سے نمٹنے کے لئے مسائل کو سنجیدہ نہیں لیتی ہے۔

نیشنل ہائیجین سروے کے مطابق، خواتین کی اکثریت جو اپنے ماہواری کے دوران پرانا کپڑا استعمال کرتی ہیں، وہ کپڑے کو دھوئے بغیر دوبارہ استعمال کرتی ہیں، کیونکہ ان کے پاس صاف پانی اور صابن تک رسائی نہیں ہے۔ اس صورت میں، سینیٹری پیڈ کا استعمال اندام نہانی کی بیماریوں سے بچنے کے لیے زیادہ آسان اور صاف طریقہ ہے۔ اس کے باوجود پاکستان کے دیہی علاقوں میں، پانچویں سے بھی کم خواتین سینیٹری مصنوعات استعمال کرتی ہیں۔ 79 فیصد پاکستانی خواتین ہر ماہ ماہواری کی ناقص صفائی کا شکار ہوتی ہیں۔

پاکستان کے سیلاب نے ان چیلنجوں کو مزید بدتر بنا دیا ہے، لیکن یہ پاکستان کے لیے ایک بار اور ہمیشہ کے لیے اپنی "غربت” کی وبا سے نمٹنے کا محرک بھی ہو سکتا ہے۔ مفت سینیٹری مصنوعات کی فراہمی مدتی غربت سے نمٹنے کے لیے انتہائی اہم ہے، لیکن پاکستان کی نوجوان لڑکیوں اور خواتین کی زندگیوں کو بہتر بنانے کے لیے صفائی کی مناسب سہولیات بھی اتنی ہی ضروری ہیں۔ سکولوں اور کام کی جگہوں پر صفائی کی سہولیات، باتھ روم، صاف پانی اور رازداری فراہم کی جانی چاہیے تاکہ نوجوان لڑکیاں اور خواتین آسانی سے سینیٹری مصنوعات استعمال کر سکیں اور سب سے بڑھ کر، پاکستان کے تعلیمی شعبے اور سول سوسائٹی کو اس بات کو یقینی بنانے کے لیے کام کرنا چاہیے کہ ماہواری دنیا کی نصف آبادی کے لیے زندگی کی ایک فطری حقیقت ہے اور اسے اب شرم کا باعث نہیں سمجھا جانا چاہیئے۔

Facebook
Twitter
LinkedIn
Print
Email
WhatsApp

Never miss any important news. Subscribe to our newsletter.

آئی بی سی فیس بک پرفالو کریں

تجزیے و تبصرے