رام چندر اور فاروق حسین کو آزادی مبارک

جون 1947،نسبت روڈ، لاہور: رام چندر کو کئی راتوں سے نیند نہیں آرہی تھی ، ہر لمحے اسے دھڑکا لگا رہتا کہ کہیں بلوائی اُس کے گھر کا دروازہ توڑ کر اندر داخل نہ ہوجائیں اور اُس کی دو عدد جوان بیٹیوں کو اٹھا کر نہ لے جائیں ۔ذرا سے کھٹکے پر وہ ہڑبڑا کر اٹھ بیٹھتااور اپنی چارپائی کے ساتھ رکھا ہوا ڈنڈا پکڑ لیتاکہ یہی اُس کاواحد ہتھیار تھا۔وہ ایک شریف اور سیدھا سادہ دکاندار تھا ، لڑائی بھڑائی کا اسے کوئی تجربہ نہیں تھا، اُس کی رہائش نسبت روڈ پر تھی جبکہ کاروبار شاہ عالم مارکیٹ میں تھا جہاں اُس کی برتنوں کی دکان تھی ، وہ صبح سویرے اپنی دکان کھولتا، لکشمی دیوی کے آگے ماتھا ٹیکتا، کاروبار کی ترقی کی دعا کرتا اور پھر شام تک دکان میں ہی مصروف رہتا، کئی برسوں سے اُس کا یہی معمول تھا۔مگر اب کچھ ہفتوں سے اِس معمول میں تبدیلی آگئی تھی، شاہ عالم مارکیٹ بند تھی،رام چندر نے سنا تھا کہ وہاں مسلمانوں نے ہندوؤں کی دکانوں کا سامان لُوٹ کرآگ لگا دی ہے۔کسی نے بتایا کہ اُس کی دکان بھی اُن تباہ شدہ دکانوں میں شامل تھی۔ کچھ مزید دل ہلا دینے والے قصے بھی اُس نے سنے تھے،موہنی روڈ پر چند بلوائیوں نے ہندو تاجروں کے گھروں پر دھاوا بول کر نہ صرف اُن کا مال و متاع لُوٹ لیا بلکہ ایک گھر میں دو جوان لڑکیوں کو اُن کےباپ اور بھائی کے سامنے بے آبرو کرکے وہیں قتل بھی کردیا۔سننے میں آیا تھا کہ یہ گھناؤنی حرکت کرنے والےلوگ گزشتہ بیس برس سے اُس ہندو تاجر کے ہمسائے تھے اور ہر خوشی غمی میں شریک ہوتے تھے۔ اِن تمام واقعات نےرام چندر کے سوچنے سمجھنے کی صلاحیت بالکل ختم کر دی تھی ، اُس کے کچھ رشتہ دار تو پہلے ہی اپنا گھر بار چھوڑ کر امرتسر چلے گئے تھے جبکہ باقیوں نے بھی سامان باندھ کر رکھ لیاتھااور کسی مناسب موقع کے انتظار میں تھے۔

 

رام چندر اپنا مکان نہیں چھوڑنا چاہتا تھا، یہ مکان اُس کے دادا نے بنایا تھا، یہاں اُس کا بچپن گزرا تھا ، نسبت روڈ کی گلیوں میں کھیل کر وہ جوان ہوا تھا،اپنے باپ کی انگلی پکڑ کر وہ بابے نذر محمد کی دکان پر جایا کرتا تھا ،جہاں سے اُس کا باپ اسے من پسند چیزیں لے کر دیتاتھا، نذر محمد اِن چیزوں کے ساتھ رام چندر کو ’چونگے ‘ میں ٹافیاں بھی دیتا اور ساتھ اُس کی صحت اور سلامتی کی دعا کرتا۔ نسبت روڈ پر اُس کے برسوں پرانے یار بیلی تھے ،اُس کے بچپن کی محبت تھی ، وہ چوبارے تھےجہاں وہ گھنٹوں جیوتی کے ساتھ بیٹھ کر مستقبل کے خواب بُنا کرتا تھا۔اِس نسبت روڈ کو چھوڑ کر وہ کیسے جا سکتا تھا ! مگر اب اُس کی دو جوان بیٹیاں تھیں، ایک بیوی تھی جس کو دمے کا مرض تھا،خود اُس کی بھی صحت ایسی نہیں تھی کہ وہ لاہور سے امرتسر کا سفر کر سکے۔یہ سب کچھ سوچ کر اسے نیند نہیں آتی تھی اور پھر وہی ہوا جس کا ڈر تھا، بلوائیوں نے رام چندر کو اُس کے آبائی مکان میں گھُس کر قتل کردیا، بلوائیوں میں ایک لڑکا انیس برس کی عمر کا تھا جسے رام چندر نے گود میں کھلایا تھا ، رشید احمد نام تھا اُس کا۔مرتے وقت رام چندر صرف اتنا دیکھ سکا کہ رشید احمد اُس کی بیٹیوں کے کمرے کی طرف جا رہا ہے اور اندر سے چیخوں کی آوازیں آ رہی ہیں۔

جون 1947، چِٹّا کڑا ، مولوی غلام علی دی گلی ،امرتسر:فاروق حسین کو جب گیتا پر بہت پیار آتا تو وہ اُس کا ہاتھ پکڑ کر اپنی آنکھوں سے لگا لیتا۔اُس روز بھی اُس نے ایسا ہی کیا مگر نہ جانے کیوں گیتا کو لگا کہ فاروق کا ہاتھ لرز رہا ہے۔دونوں نے ایک دوسرے سے کوئی بات نہ کی اور سامنے دیکھنے لگے، منظر کچھ خاص نہیں تھا، بس ایک میدان تھاجس کے آگے درختوں کا جھُنڈ تھا اور ساتھ ہی خشک ٹیلا تھا۔وہ چِٹا کڑا سے نکل کر اکثر یہاں آیا کرتے اور گھنٹوں ایک دوسرے کے ہاتھ میں ہاتھ ڈالے یہ منظر دیکھتے رہتے۔مگر اب انہیں لگتا تھا کہ وہ یہاں کبھی نہیں آ سکیں گے،شاید اسی لیے کچھ نہ کہہ کر بھی دونوں کی آنکھیں بھیگ گئیں ۔یہ بالکل عام سی جگہ تھی مگر اِن کالڑکپن اور جوانی یہاں گزری تھی، اُن کے لیے یہ جگہ جنت کا ٹکڑا تھی،انہوں نے کبھی سوچا بھی نہیں تھا کہ اُن کی زندگیوں میں ایک دن ایسا بھی آئے گاکہ انہیں یہ جگہ چھوڑ کر ،اپنا گھربار چھوڑ کر،کہیں اورجانا پڑے گا۔آج کل اُن کے گھروں میں یہی باتیں ہوتی تھیں۔فاروق حسین کا باپ امرتسر کے ہال بازار میں سُنار تھا .

 

جس دن اُس نے سنا کہ ہندوؤں کے ایک جتھے نے امرتسر کے محلے میں مسلمانوں کے گھروں کو آگ لگا کر سب کو قتل کردیا ہےاور مرنے والوں میں چھ ماہ کا ایک بچہ بھی شامل ہے ،اُس دن فاروق حسین کے باپ نے فیصلہ کرلیا کہ وہ امرتسر چھوڑ کر پاکستان چلا جائے گا اور جب حالات ٹھیک ہو جائیں گے واپس آجائے گا۔ اُس کے سامنے والے مکان میں اُس کا جگری دوست امر سنگھ رہتا تھا ،امر سنگھ نے اسے یقین دلایا کہ اُس کے ہوتے ہوئے بلوائی چِٹّا کڑا میں نہیں آئیں گے ، ’’آخر ہم کئی سال سے اکٹھے رہ رہے ہیں ، یہ کیسے ہوسکتا ہے کہ اب مشکل وقت میں ساتھ چھوڑ دیں۔‘‘یہ امر سنگھ کے الفاظ تھے۔مگرایک رات ہندوؤں اور سکھوں کا ایک جتھا چِٹّا کڑا، مولوی غلام علی دی گلی میں داخل ہوا،بلوائیوں نے ہاتھ میں کرپان اور برچھیاں پکڑی ہوئی تھیں۔اکثر کی عمریں بیس اور پچیس سال کے درمیان تھیں ، اُن میں سے ایک نے، جس کا نام بلجیت سنگھ تھا، آگے بڑھ کے فارو ق حسین کے گھر کے دروازے کو توڑنا چاہا مگر امر سنگھ سامنے آ کر کھڑا ہوگیا۔’’اِس گھر میں کوئی نہیں جائے گا،یہ میرے یار کا گھر ہے،سمجھو میرا گھر ہے۔‘‘ امر سنگھ کڑک کر بولا۔ بلجیت کی آنکھیں ایک لمحے کے لیے حیرت سے پھیل گئیں مگر پھر یکدم اُن میں نفرت اُمڈ آئی ۔’’اگر یہ تیرا گھر ہے امر سنگھ تو پھر تو بھی انہی کے ساتھ جائے گا ، تیری بیٹیاں بھی ، بیوی بھی اور جوان لڑکا بھی ۔‘‘امر سنگھ کانپ اٹھا،اُس نے مجمع کی طرف دیکھا، اُن کی آنکھوں میں بھی اسے نفرت کے سوا کچھ نظر نہیں آیا، وہ چپ چاپ سامنے سے ہٹ گیا۔بلوائیوں نے ایک ہی ہلے میں دروازہ توڑا اور اندر داخل ہوگئے ۔فاروق حسین نے انہیں روکنا چاہا مگر بلجیت نے ایک ساتھی کی مدد سے اسے فرش پر لٹا یا اور اُس کے باپ کے سامنے اُس کے گلے پر چھُری پھیر دی، بیٹے کے خون کے چھینٹے باپ کی سفید قمیض پر پڑے ،قمیض سُرخ ہوگئی ۔اُس رات چِٹّا کڑا، مولوی غلام علی دی گلی میں مسلمانوں کے گھروں سے بیس لاشیں ملیں اور چار جوان لڑکیاں لا پتا ہو گئیں ۔

14 اگست 1947:یہ آل انڈیا ریڈیو لاہور ہے، آپ کو آزادی مبارک ہو۔

Facebook
Twitter
LinkedIn
Print
Email
WhatsApp

Never miss any important news. Subscribe to our newsletter.

مزید تحاریر

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

تجزیے و تبصرے