کشمیر میں تباہی کو روکنے کے لیے فوری بین الاقوامی اقدام کی ضرورت ہے

مسئلہ کشمیر تین ایٹمی طاقتوں کے درمیان پھنسے ہوئے خطرناک خطے میں ایک ٹک ٹک ٹائم بم ہے۔ جیسا کہ عالمی یوم ماحولیات منا رہا ہے، کشمیر میں ممکنہ جوہری تصادم کے سنگین خطرے کو اجاگر کرنا بہت ضروری ہے۔ حالیہ رپورٹس نے ہندوستان اور پاکستان کے درمیان جنگ کے مضمرات پر خطرے کی گھنٹی بجا دی ہے، جس میں طوفان کا مرکز کشمیر ہے۔

کشمیر کی غیر مستحکم صورتحال جوہری ہتھیاروں سے لیس پڑوسیوں کے درمیان کشیدگی میں اضافے کا ایک سنگین خطرہ ہے، جس سے تباہ کن ایٹمی جنگ کا امکان ہے۔ اس طرح کے تصادم کے نتائج نہ صرف خطے کے لیے تباہ کن ہوں گے بلکہ عالمی آب و ہوا پر بھی اس کے گہرے اثرات مرتب ہوں گے۔

بڑے پیمانے پر جوہری تبادلے کے نتیجے میں جوہری موسم سرما کے ماحول پر تباہ کن اثرات مرتب ہوں گے، جس کے نتیجے میں عالمی سطح پر ٹھنڈک، زراعت میں خلل، مہلک قحط، اور عالمی حدت میں اضافہ ہوگا۔ جیسا کہ ہم ماحولیاتی مسائل اور پائیداری پر توجہ مرکوز کرتے ہیں، ہمیں کشمیر میں ایٹمی جنگ کو روکنے کی ضرورت پر بھی فوری توجہ دینی چاہیے۔

عالمی رہنماؤں کو جوہری تنازع کے تباہ کن نتائج کو روکنے کے لیے مذاکرات، امن اور تنازعات کے حل کو ترجیح دینی چاہیے۔ آئیے ہم امن کی وکالت کرنے، اپنے سیارے کی حفاظت کرنے، اور سب کے لیے ایک محفوظ اور پائیدار مستقبل کو محفوظ بنانے کے لیے اکٹھے ہوں۔ اب عمل کرنے کا وقت ہے۔ مسئلہ کشمیر کو بروقت حل کرنے میں عالمی برادری کی بے عملی کے سنگین نتائج نکل سکتے ہیں۔ ہندوستان اور پاکستان کے ساتھ ساتھ ہندوستان اور چین کے درمیان کشیدہ تعلقات نے ایک غیر مستحکم ماحول پیدا کیا ہے جہاں کوئی بھی چھوٹا واقعہ ممکنہ طور پر اس جگہ موجود نازک جنگ بندی کو متاثر کرسکتا ہے۔ بھارت میں انتخابات ختم ہونے اور نئی حکومت کے کمزور ہونے اور پاکستان میں سیاسی بحران بڑھنے سے کشمیر کی صورتحال مزید بڑھنے کا خطرہ ہے۔

اگر عالمی برادری مداخلت کرنے اور دونوں ممالک پر کشمیری قیادت کے ساتھ بات چیت کے لیے دباؤ ڈالنے میں ناکام رہی تو کشمیر کی صورتحال قابو سے باہر ہو سکتی ہے۔ اس طرح کی بے عملی کے اثرات میں تشدد میں اضافہ، انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں اور خطے میں پہلے سے کشیدہ صورتحال کا مزید بگاڑ شامل ہو سکتا ہے۔

اس منظر نامے کو سامنے آنے سے روکنے کے لیے اقوام متحدہ کے لیے ضروری ہے کہ وہ اپنی نگرانی میں حفاظتی اقدامات اور سفارت کاری کو فعال کرے۔ بھارت اور پاکستان دونوں پر کشمیری رہنماؤں کے ساتھ بامعنی مذاکرات کرنے کے لیے دباؤ ڈالنا چاہیے، جنہیں پرامن مذاکرات میں سہولت فراہم کرنے کے لیے رہا کیا جانا چاہیے۔ کشمیر میں ممکنہ تباہی کو روکنے اور اس میں شامل تمام لوگوں کے لیے ایک پرامن اور پائیدار مستقبل کو یقینی بنانے کے لیے اقدامات کرنے کا وقت ہے۔

Facebook
Twitter
LinkedIn
Print
Email
WhatsApp

Never miss any important news. Subscribe to our newsletter.

مزید تحاریر

آئی بی سی فیس بک پرفالو کریں

تجزیے و تبصرے