سانحہ بلدیہ فیکٹری کا مرکزی ملزم بنکاک سے کراچی منتقل

سانحہ بلدیہ فیکٹری کیس میں اہم پیش رفت سامنے آئی ہے اور وفاقی تحقیقاتی ادارے (ایف آئی سے) نے کیس کے مرکزی ملزم رحمٰن عرف بھولا کو بنکاک سے کراچی منتقل کردیا ہے۔

ڈان نیوز کے نمائندے کے مطابق ایف آئی اے کی دور کنی ٹیم رحمٰن عرف بھولا کو لیکر کراچی پہنچی تھی۔

ایف آئی اے کی کاونٹر ٹررازم وننگ کی دو رکنی ٹیم ڈپٹی ڈائریکٹر سی ٹی ڈبلیو بدر بن بلوچ اور انسپکٹر رحمت اللہ کی قیادت میں رحمٰن بھولا کو لے کر کراچی ایئر پورٹ پہنچی۔

ملزم بھولا کو ضابطے کی کارروائی کے بعد ایئرپورٹ سے نامعلوم مقام پر منتقل کیا گیا، جہاں تحقیقاتی ادارے اس سے تفتیش کریں گے۔

خیال رہے کہ تھائی لینڈ کی پولیس نے کچھ دن قبل ہی بھولا کو بنکاک سے گرفتار کیا تھا اور ملزم کو کراچی منتقل کرنے کیلئے ایف آئی اے کی ٹیم بنکاک روانہ کی گئی تھی اور انھیں انٹرپول کی مدد سے کراچی لایا گیا۔

یاد رہے کہ ہولناک سانحے میں ڈھائی سو سے زائد افراد جل کر جاں بحق ہوئے تھے۔

ایک اور رپورٹ کے مطابق بعد ازاں پولیس نے سانحہ بلدیہ فیکٹری کے مزید ایک ملزم کو گرفتار کرنے کا دعویٰ بھی کیا۔

ملزم کی شناخت ہائی پروفائل ٹارگٹ کلر یوسف عرف گدھا گاڑی کے نام سے کی گئی ہے، جس نے اہم انکشافات کرتے ہوئے پولیس کو بتایا کہ وہ سانحہ بلدیہ فیکٹری کے مرکزی کردار رحمٰن بھولا کا قریبی ساتھ ہے۔

ملزم یوسف کے انکشافات کی ویڈیو اور تفتیشی رپورٹ کے مطابق ملزم کا کہنا تھا کہ بلدیہ فیکٹری میں آگ کے واقعے کے وقت اصغر بیگ بلدیہ سیکٹر کا یونٹ انچارچ تھا بعد میں رحمٰن بھولا کو چارج دے دیا گیا۔

ملزم یوسف کا کہنا تھا کہ اصغر بیگ نے فیکٹری میں آگ لگانے کے بعد تین دن تک امدادی کیمپ لگایا اور وہ ہی سانحہ بلدیہ فیکٹری کا مرکزی ملزم جبکہ سیاسی جماعت کی ٹارگٹ کلنگ ٹیم کا لیڈر بھی تھا۔

یوسف عرف گدھا گاڑی نے انکشاف کیا کہ اصغر بیگ کی پوری فیملی بلدیہ فیکٹری میں کام کرتی تھی، اصغر بیگ کا بھائی اشرف بیگ فیکٹری میں مینجر تھا، فیکٹری کے اندر کی معلومات اصغر بیگ کی فیملی کے ذریعے باہر آتی تھیں۔

پولیس کا کہنا تھا کہ یوسف عرف گدھا گاڑی نے ساتھیوں کے ہمراہ 16 قتل کی وارداتیں کی، جن میں عزیر بلوچ کے قریبی ساتھی شاہجہاں بلوچ کا قتل بھی شامل تھا۔

اس کے علاوہ ملزم پر رشید آباد میں اے این پی کے 5 کارکنان کو قتل کرنے کا بھی الزام ہے۔

Facebook
Twitter
LinkedIn
Print
Email
WhatsApp

Never miss any important news. Subscribe to our newsletter.

مزید تحاریر

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

تجزیے و تبصرے