شہباز کی صدارت اور نوازکا بیانیہ

بالآخر شہباز شریف کو مسلم لیگ نواز کا قائم مقام صدر بنا دیا گیا۔ شہباز شریف کے قائم مقام صدر بننے سے کئ سوالات نے جنم لیا ہے۔ کیا مشکلات سے دشوار حکمران جماعت نے کلثوم نوا کے بجائٙے شہباز شریف کو قائم مقام صدر بنا کر نادیدہ قوتوں کو مفاہمت کا سگنل دے دیا ہے ؟ کیا نواز شریف برے پولیس مین اور شہباز شریف اچھے پولیس مین کا کردار نبھاتے رہیں گے ؟ کیا شہباز شریف بطور ایک مرکزی رہنما اپنی جماعت کو متحد رکھنے پائیں گے ? شہباز شریف مسلم لیگ نواز کی روایتی سوچ کے علمبردار ہیں جو اداروں سے مفاہمت سے کام لینے اور چپ چاپ ڈکٹیشن کے تابع کام کرنے پر یقین رکھتے ہیں۔ ان کی انتظامی صلاحیتیں اپنی جگہ ،لیکن ایک مرکزی قائد کے طور پر ان کی قیادت پر سوالیہ نشان موجود ہیں۔

بہر حال نواز شریف جب تک شہباز شریف کی پشت پر موجود ہیں تب تک شہباز شریف کو اس کمی کا زیادہ نقصان نہیں اٹھانا پڑے گا۔ لیکن سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ کیا نواز شریف کو عدلیہ کے ذریعے شکار کرنے والی قوتیں نواز شریف کو اپنی جماعت کے امور پر گرفت رکھنے کی اجازت دیں گی؟ موجودہ حالات کے تناظر میں یہ مشکل دکھائ دیتا ہے کہ نواز شریف کو ان کے جماعت کے امور پر گرفت رکھنے کی اجازت مل سکے۔ اگر مسلم لیگ نون کی انتخابی مہم سے نواز شریف بوجہ پابندی باہر ہوئے تو شہباز شریف اس پوزیشن میں نہیں ہیں کہ وہ مسلم لیگ نون کیلئے پاپولر ووٹ حاصل کر کے اسےانتخابات میں فیصلہ کن برتری دلوا سکیں۔ شہباز شریف کو صدر بنا کر اگر مفاہمت کا پیغام دیا گیا ہے تو یہ ایک سنگین غلطی ہے۔ وہ قوتیں جو شریف خاندان کا نام بھی سننا نہیں چاہتیں ہرگز بھی شہباز شریف کی صورت میں مسلم لیگ نواز کو دوبارہ سے قدم جمانے کا موقع نہیں دیں گی۔

مسلم لیگ نون کا "لاہوری گروپ” جو ابھی بھی ایسٹیبلیشمنٹ سے صلح کر کے اقتدار کے تسلسل کو جاری رکھنے کا خواہاں ہے وہ یہ حقیقت نظر انداز کر رہا ہے کہ جس نہج پر مسلم لیگ نون اپنی سیاست کو لے جا چکی ہے وہاں سے واپسی اب ناممکن ہے۔ باالفرض اگر کسی مفاہمت کے ذریعے اقتدار حاصل کر بھی لیا جائے تو نہ صرف اس عمل سے مسلم لیگ نون کی عوامی تائید میں کمی آئے گی بلکہ مسلم لیگ نون ایک بار پھر نادیدہ قوتوں کے رحم و کرم پر رہ جائے گی ۔ اگر شہباز شریف گڈ کاپ (اچھے پولیس مین ) کا رول ادا کرتے ہوئے یہ چاہ رہے ہیں کہ وہ نادیدہ قوتوں کی گڈ بکس میں رہیں اور دوسری جانب نواز شریف اپنا بیانیہ عوام تک پہنچاتے ہوئے جارحانہ سیاست کا انداز اپنائے رکھیں تو یہ بھی ایک غلط اندازہ ہے۔پنجاب میں احد چیمہ کی گرفتاری کے بعد اب عابد باکسر کو بھی وطن واپس لایا جا رہا ہے اور محسوس یوں ہوتا ہے کہ گڈ کاپ کا یہ کھیل اب زیادہ عرصہ نہیں چلنے پائے گا۔ جس انداز سے پنجاب میں شہباز شریف کے گرد گھیرا تنگ کیا جا رہا ہے اس کو دیکھتے ہوئے کہا جا سکتا ہے کہ یا تو شہباز شریف کو مکمل سمجھوتہ کرتے ہوئے مسلم لیگ نون کے اینٹی ایسٹیبلیشمنٹ بیانئیے کو مکمل طور پر تبدیل کرنا پڑے گا یا پھر انہیں بھی نااہلی کی تلوار سے شکار کر لیا جائے گا۔

مسلم لیگ نون کو متحد رکھنا بھی شہباز شریف کیلئے ایک کڑا امتحان ہو گا اور نواز شریف کے بیانیے سے ذرا بھی ادھر ادھر ہٹنا مسلم لیگ نون میں دھڑے بندیوں کا باعث بنے گا۔ شاید بہت سے تجزیہ نگار یہ حقیقت سمجھنے سے قاصر رہے ہیں کہ نواز شریف کی وزارت عظمی کی نااہلی سے زیادہ نقصان دہ فیصلہ ان کی اپنی جماعت کی صدارت سے نااہلی کا فیصلہ ہے۔ ابھی تک اگر مسلم لیگ نون نے اپنے قدم جما کر رکھے ہیں تو اس کا سہرا نواز شریف کے "مجھے کیوں نکالا ” اور "ووٹ کو عزت دو ” کے بیانیوں کے سر ہے۔ جس دن یہ بیانیے کمزور پڑے اس دن مسلم لیگ نواز کیلئے خود کو عوام میں مضبوط رکھنا مشکل ہو جائے گا۔ دوسری جانب نواز شریف نے تا حیات قائد بن کر نادیدہ قوتوں کو عندیہ دے دیا ہے کہ جماعت کے معاملات پر ان کی گرفت پہلے کی طرح برقرار رہے گی۔ اس وقت نواز شریف کو سب سے زیادہ ضرورت اس ہمدردی کی عوامی لہر کو قائم رکھنے کی ہے جس کے نتیجے میں ان کی مقبولیت میں اضافہ ہوا ہے۔ لیکن اگر نواز شریف اپنی جماعت کے "لاہوری گروپ” کی بات مان کر مفاہمت کی آس لگائے بیٹھے ہیں تو وہ اس لڑائ میں نقصان اٹھائیں گے۔ اگر نادیدہ قوتوں نے مفاہمت کرنی ہوتی تو شہباز شریف کو پنجاب میں ہرگز بھی نہ چھیڑا جاتا وہ بھی اس حقیقت کو جانتے ہوئے کہ اگر شہباز شریف بھی سائڈ لائن ہو گئے تو پارٹی صدارت کلثوم نواز کے پاس چلی جائے گی اور کلثوم نواز کا سیاسی فلسفہ مریم نواز کی مانند کسی بھی قسم کے کمپرومائز سے عاری ہے۔ ایس تمام تر صورتحال میں مسلم لیگ نواز کیلئے انتخابات تک کا عرصہ پل صراط پر چلنے کے مانند دکھائ دیتا ہے جہاں طاقت کی بساط پر ایک بھی غلطی ان کے انتخابی قلعے میں دراڑ ڈالنے کا سبب بن سکتی ہے۔

نواز شریف کیلئے اس وقت سب سے موثر کارڈ مریم نواز کی صورت میں موجود ہے۔ مریم نواز نے نوجوانوں سمیت عوام کے بڑے حصے کو اپنی جماعت کے ساتھ جذباتی اور نظریاتی طور پر وابستہ کیا ہے اور ان کا ہر جلسہ نہ صرف عوام کی اچھی خاصی تعداد کو جلسہ گاہ تک کھینچ لاتا ہے بلکہ ان کا جارحانہ انداز نادیدہ قوتوں کو بھی بیک فٹ پر دھکیلنے کا باعث بنتا ہے۔ مریم کے جارحانہ انداز سیاست کو کیش کرتے ہوئے اگر انہیں انتخابی مہم میں شہباز شریف کے شانہ بشانہ کردار ادا کرنے کی ذمہ داری سونپی جائے تو مسلم لیگ نون کے حق میں یہ بہتر نتائج لانے کا سبب بن سکتا ہے۔ نواز شریف کی تقاریر پر پابندی یا انہیں پابند سلاسل کرنے کی صورت میں مریم نواز ان کا بہترین متبادل ثابت ہو سکتی ہیں۔ شہباز شریف اور "لاہوری گروپ” چوہدری نثار کو پھر سے جو ساتھ ملانے کی کوشش کر رہا ہے اس کا فائدہ بھی مسلم لیگ نون کو حاصل ہوتا دکھائ نہیں دیتا۔ چوہدری نثار کی مفاہمتی سیاست کا انداز آصف زرداری جیسا ہے یعنی نادیدہ قوتوں سے سو جوتے اور سو پیاز کھا کر سر جھکا کر ان کی ڈکٹیشن لے کر مدت حکمرانی پوری کرنا۔ اس انداز نے مسلم لیگ نون اور نواز شریف کو چار سال تک نادیدہ قوتوں کے ہاتھوں یرغمال بنائے رکھا اور آخر میں تمام تر سمجھوتوں کے باوحود بھی انہیں نکال باہر پھینکا گیا۔یہ مسلم لیگ نون کا اینٹی ایسٹیبلیشمنٹ بیانیہ ہے جس نے سیاست کا محور نواز شریف کو بنا دیا ہے۔ اس وقت بالکل بھٹو کی مانند آج کی سیاست نواز شریف اور اینٹی نواز شریف بیانئیے کے گرد گھومتی ہے۔ یہ بیانیہ وقتی طور پر تو شاید کچھ سیاسی نقصان دے سکتا ہے لیکن اس کے سود مند نتائج دور رس اور بہت زیادہ ہیں۔ مشرف دور میں جب نواز شریف کو نااہل کیا گیا تھا اور ان کے سیاست کرنے پر بھی پابندی عائد کر دی گئ تھی تو اسی اینٹی ایسٹیبلیشمنٹ بیانئیے نے مسلم لیگ نواز کو زندہ رکھا تھا اور یہی بیانیہ نواز شریف کی سیاست میں واپس انٹری کا باعث بنا تھا۔ اس دور میں جاوید ہاشمی ، مشاہد الہ خان ، خواجہ آصف، سعد رفیق اور تہمینہ دولتانہ نے ریاستی جبر کا سامنا کرتے ہوئے اپنی زندگی کا ایک بے حد قیمتی حصہ کال کوٹھڑی اور بد ترین ٹارچر کی نذر کر کے اپنی جماعت کو زندہ رکھا تھا۔

حالات و واقعات تقریبا پھر سے ویسے ہی بنتے جا رہے ہیں اور کسی بھی قسم کی مفاہمتی سیاست مسلم لیگ نون کے وجود کیلئے انتہائ خطرے کا باعث بن سکتی ہے۔ نادیدہ قوتیں اگر اپنے مہرے عمران خان کو وزارت عظمی کی کرسی پر بٹھانے کا تہیہ کر چکی ہیں تو پھر شہباز شریف اور ان کے حامیوں کا مفاہمانہ انداز سیاست کسی بھی طور مسلم لیگ نون کیلئے سود مند ثابت نہیں ہو گا ۔ نواز شریف کی نظریاتی و سیاسی جانشین کے طور پر مریم نواز جگہ لے چکی ہیں اور عوام نے اس حقیقت کو قبول کر لیا ہے۔ شہباز شریف مریم نواز کی جانشینی کے اس تاثر کو زائل کر پائیں گے یا نہیں یہ بھی ان کیلئے ایک کڑے انتحان سے کم نہیں ہو گا۔ زمینی صورتحال جو بتدریج تبدیل ہو چکی ہے اس کے اندر مسلم لیگ نواز روایتی سیاست کے ذریعے ہرگز کامیابی نہیں حاصل کر سکتی ۔اور مریم نواز، نواز شریف کے بعد اس جماعت کی عوام میں بقا کی ضمانت نظر آتی ہیں نا کہ شہباز شریف۔ مسلم لیگ نون اقتدار میں دوبارہ آتی ہے یا نہیں یہ بات قطعی بھی اہمیت کی حامل نہیں ہے۔ لیکن اگر ووٹ کی حرمت اور بیلٹ باکس کی طاقت کو بندوق کی طاقت پر غلبہ دلوانے کا نواز شریف اور مریم نواز کا بیانیہ سچا ہے تو پھر اس بیانیے کو مسلم لیگ کے اندر اور باہر مقتدر قوتوں پر حاوی آنا چائیے۔ کیونکہ جمہوریت اور وطن کی بقا بیلٹ بکس کی طاقت کو مانے جانے سے مشروط ہے۔

Facebook
Twitter
LinkedIn
Print
Email
WhatsApp

Never miss any important news. Subscribe to our newsletter.

آئی بی سی فیس بک پرفالو کریں

تجزیے و تبصرے