جوہری اشتراک کے معاہدے

جوہری اسلحہ اپنی تباہ کاری کی صلاحیت ‘ طاقت‘ انشقاق یا اتحاد جیسے مرکزی تعاملات (نیوکلیئر ری ایکشنز) سے حاصل ہوتا ہے۔ انشقاق اور ائتلاف (اتحاد) جیسے مرکزی طبیعیاتی عوامل سے توانائی اخذ کرنے کی وجہ سے ہی ایک چھوٹے سے مرکزی اسلحہ کا محصول (یعنی اس سے نکلنے والی توانائی ) ایک بہت بڑے روایتی بم کے مقابلے میں کئی گنا زیادہ ہوتی ہے‘صرف ایک بم ہی تمام کا تمام براعظم ملبے میں بدلنے کی طاقت رکھتا ہے۔

انسانی تاریخ المحارب کے تمام تر نوشتہ جات میں کیمیائی اسلحہ صرف دو بار ہی استعمال ہوا۔ جنگ عظیم دوم میں امریکہ کی جانب سے جاپان کے دو شہروں پرایٹم بم گرائے گئے۔ پہلا یورینیم پرمنحصر بم 6 اگست 1945ء کو جاپانی شہر ہیروشیما پر گرایا گیا ‘ اس کانام لٹل بوائے رکھا گیا‘ جبکہ دوسرا اس کے تین روز بعد دوسرے جاپانی شہر ناگاساکی پرپھینکا گیا‘ جس کا نام فیٹ مین تھا اور یہ پلوٹونیم پر منحصربم تھا۔ اس مہلک اور مہیب اسلحہ کے استعمال نے 100,000 سے 200,000 انسانی جانوں کو آن کی آن میں فنا کر دیا‘ بعد میں ان کی تعداد میں مزید اضافہ ہوا۔ صرف ہلاکتیں ہی نہیں بلکہ عرصہ دراز تک کئی معذور اور سرطان زدہ بچے پیدا ہوئے۔ مضحکہ خیز بات یہ ہے کہ اس کے استعمال کے ایک عرصے کے بعد آج بھی بحث جاری ہے کہ اس کا استعمال درست تھا یا نہیں۔چہ مگوئیاں جاری ہیں ‘کوئی کہتا ہے فیصلہ بہتر تھا‘جس کی وجہ سے جنگ بندی کا عمل شروع ہوا اور دونوں اطراف ہلاکتیں تھم گئیں۔ مگر انسانی جانوں کا ضیاع ناقابل برداشت ہے۔

امریکہ اور روس کے درمیان رقابت کا معاملہ نیا نہیں‘ سٹریٹجک ہتھیار‘ استحکام کے فریم ورک کے کئی مختلف عناصر ‘کشیدگی کی صورتحال پیدا کیے ہوئے ہیں۔اینٹی بیلسٹک میزائل معاہدہ اور انٹرمیڈیٹ رینج نیوکلیئر فورسز (آئی این ایف) کے معاہدہ سمیت کئی اہم معاہدے ہمیشہ سر فہرست رہے ۔ایک ہی وقت میں واشنگٹن اور ماسکو اپنی رکاوٹوں کودور کرتے ہوئے اپنی ایٹمی کرنسی کو برقرار رکھنے یا بہتر بنانے کے لئے بھر پور کوشش کررہے ہیں۔ایٹمی ہتھیاروں کی صلاحیتوں کے بارے میں تجدیدِ توجہ امریکہ کے ایٹمی طاقت جیسے عناصر پر بھی اثر اندازہورہا ہے۔یہ بات زبان زدِ عام ہے‘ابتدائی طور پر خفیہ معاہدوں کے ذریعے امریکہ کئی یورپی ممالک میں ”جوہری اشتراک‘‘ کے تحت تکنیکی بنیادوںپر ایٹمی ہتھیار ذخیرہ کر رہاہے۔فی الحال نیٹو کے معاہدوں کے تحت‘ جرمنی‘ اٹلی‘ نیدرلینڈز‘ بیلجیم اور ترکی اپنی زمین پر امریکی تکنیکی ایٹمی ہتھیاروں کی میزبانی کر رہے ہیں۔اس عمل سے امریکہ کسی بھی سرد جنگ کے لیے یورپ میں اپنی ایٹمی چھت کوتیار کر تے ہوئے تیزی سے آگے بڑھتا ہوا دکھائی دیتا ہے ۔

مبصرین کا کہنا ہے کہ ابتدائی طور پرجوہری اشتراک کرنے والے معاہدے (خفیہ طور پر) بہت سے یورپی نیٹو اتحادیوں کے ساتھ خاص مقاصد کے لیے کیے گئے ۔معاہدوں سے منسلک ایٹمی ہتھیاروں کو آگے بڑھانے کے سب سے واضح فوائد میں سے ایک ہتھیاروں کو تیزی سے تعینات کیا جاسکے گا۔حقیقت میں‘ان ممالک کی فضائی افواج ان ہتھیاروں کی میزبانی کے ساتھ اعلیٰ تربیت یافتہ ہیں۔یہاں پر اہم بات یہ ہے کہ ان ممالک کو آلات کو چالو کرنے کے لئے امریکی منظوری کی ضرورت ہوگی۔اس حوالے سے بہت سے نظریات زیرغور ہیں‘یہ خیال کیا جا رہا ہے کہ بعض اتحادیوں کو امریکی ایٹمی ہتھیار تک رسائی فراہم کرنے سے انہیں اپنی خودمختار صلاحیتوں کو ڈھونڈنے کے عمل سے حوصلہ شکنی ہوگی۔ایٹمی اشتراک کے معاہدوں سے خود کو نیوکلیئرملک اور غیر قانونی طور پر معاہدے کی خلاف ورزی نہیں سمجھا جا رہا کیونکہ تکنیکی طور پر اسلحہ اب بھی امریکی کنٹرول میں ہے جو امریکہ کے اہلکاروں کی حفاظت کرتا ہے اور صرف اقوام متحدہ کو ایک بار پھر جاری کیا جائے گا۔

اس وقت بیرونِ ملک مقیم ایٹمی بموں میں موجودہ فضائی آٹومیٹک ایٹمی بم زیادہ طاقتور ہتھیارتصور کیے جاتے ہیں۔ امریکہ نے سرد جنگ کے دوران یورپ میں جوہری ہتھیار مسلح انٹرمیڈیٹ رینٹل بیلسٹک میزائل اور کروز میزائل تعینات کیے ۔اس کے لیے INF معاہدہ کیا گیا جو 1987 ء میں وجود میں آیا اور وہ مؤثر طریقے سے ان میزائلوں کو بیرون ملک منتقل کرنے اور ختم کرنے کا باعث بنا تھا۔بعد میں ایٹمی اشتراک کے معاہدے ہوئے‘ امریکہ نے یورپی یونین میں جوہری ہتھیاروں کو برقرار رکھا اور اس کے ساتھ ساتھ ضرورت کے مطابق تربیت یا تصدیق شدہ ایئر فورسز کولے کر ان کو تعینات کیا گیا ۔یہ بات بھی درست ہے کہ موجودہ فارم کے تحت امریکی اوریورپی ایٹمی اشتراک کے معاہدے کا مستقبل کوئی نہیں۔ اس ارتقا پر واپس نظر آتے ہیں‘ INF معاہدوں کے ختم ہونے پر کم سے کم اگست میں توقع کی جارہی ہے کہ سرکاری طور پر منسوخی یا معطلی ‘

عام طور پر یورپ میں تعینات امریکی ایٹمی ہتھیاروں کی نئی تجدید کی علامت ہوگا۔تاہم واشنگٹن اور برسلز پہلے ہی یورپ میں بیس یاایٹمی ہتھیاروں سے مسلح میزائلوں کا ارادہ مسترد کر چکے ہیں ۔حقیقت یہ ہے کہ اٹلانٹک کے پگھلتے ہوئے گلیشیرز کی طرح امریکہ ان معاہدوں میں بہت زیادہ آگے بڑھ چکا ہے ۔ یہاں تک کہ مجموعی طور پر جوہری اشتراک کے معاہدوں کی توثیق پر بھی سوالات اٹھ رہے ہیں۔یورپ میں امریکی ایٹمی میزائلوں کا امکان‘ امریکہ اور روس کے درمیان وسیع پیمانے پر ایٹمی مقابلہ میں یورپ کی حیثیت کے بارے میں خدشات پیدا کیے ہوئے ہے ۔ایٹمی میزبان ممالک کی بڑھتی ہوئی تعداد‘ان میں گورنمنٹ پارٹیوں کے ارکان بھی شامل ہیں ‘ امریکی ایٹمی ہتھیاروں کی ضرورت پر غور کر رہے ہیں۔

یہ بحث کئی سال قبل ہو چکی‘ جب امریکہ نے اعلان کیا کہ یورپی یونین کو ہواؤں سمیت اپنی فضائیہ سے متعلق ایٹمی ہتھیاروں کو جدید بنانا ہوگا۔جدید کاری کے منصوبوں کو آگے بڑھاتے ہوئے ‘ یورپی میزبان مشترکہ معاہدوں کے تحت مسلسل جوہری کردار اداکرتے رہے ہیں۔لیکن اس کے بعد سے روس اورامریکہ کے درمیان جوہری مقابلہ تیز ہوگیا ۔اب تجدیدی منصوبوں کو یورپی طرف سے بحث میں لانے کا امکان موجود ہے‘ لہٰذا اس کی موجودہ شکل کے تحت جوہری اشتراک کے معاہدے کا مستقبل مختلف ہو سکتا ہے۔

Facebook
Twitter
LinkedIn
Print
Email
WhatsApp

Never miss any important news. Subscribe to our newsletter.

آئی بی سی فیس بک پرفالو کریں

تجزیے و تبصرے