افغان طالبان کے دو دھڑوں میں لڑائی، 50 جاں بحق

talibanافغانستان میں طالبان کے دو مخالف دو ھڑوں میں جھڑپوں کے دورا ن کم از کم 50 ہلاکتوں کی اطلاعات ہیں۔

جنوب مشرقی صوبے زابل کے ضلع ارغن داب کے گورنر محمد نوسترایار نے بتایا کہ پچھلے دو دنوں سے جاری جھڑپوں میں علیحدہ ہونے والے ملا محمد رسول کے دھڑے کودولت اسلامیہ کے شدت پسندوں کی مدد حاصل ہے۔

زابل صوبے کے ڈپٹی پولیس چیف غلام جیلانی نے بتایا کہ جھڑپوں کا آغاز ہفتہ کی صبح خاک افغان اور ارغن داب اضلاع میں ہوا اور اب تک ملا رسول گروپ کے 60 جبکہ اختر منصور گروپ کے 20 جنگجو مارے جا چکے ہیں۔

یہ دونوں اضلاع طالبان کنٹرول میں ہیں اور یہ واضح نہیں ہو سکا کہ غلام جیلانی کے پاس یہ اعداد و شمار کیسے پہنچے۔

زابل صوبے کے گورنر کے ترجمان اسلام گل سیال نے لڑائی کی تصدیق کرتے ہوئے بتایا کہ جھڑپیں جاری ہیں۔

ملا اختر منصور کے مخالف عسکریت پسندوں نے گزشتہ ہفتے ایک بڑے جرگے میں ملا رسول کو اپنا ’سپریم لیڈر‘ منتخب کیا تھا۔

جولائی میں افغان طالبان کے سربراہ ملا عمر کی دو سال قبل موت کی خبریں سامنے آنے کے بعد گروپ میں قیادت کا بحران پیدا ہو گیا تھا۔

مبصرین ماضی میں طالبان گروپ میں دھڑے بندی رپورٹ کرتے رہےہیں لیکن پہلی مرتبہ یہ دھڑا بندی کھل کر سامنے آئے ہے۔

طالبان کے ایک سینئر عہدے دار کے مطابق، ابھی تک یہ واضح نہیں کہ ملا رسول کو کتنی حمایت حاصل ہے۔

ملا منصور کے ایک وفا دار کمانڈر نے نام نہ ظاہر کرنے کی شرط پر بتایا کہ ملا رسول دھڑے نے عددی طاقت نہ ہونے کی وجہ سے دولت اسلامیہ کے جنگجوؤں سے ہاتھ ملا لیے ہیں۔

’صاف ظاہر ہے کہ ملا رسول گروپ اکیلے ہمارا سامنا نہیں کر سکتا لہذا انہیں دولت اسلامیہ کی ضرورت ہے۔ہم نے پہلے بھی یہ کہا تھا ، جو اب ثابت ہو رہا ہے‘۔

خیال رہے کہ شام اور عراق کے وسیع او عریض علاقے پر قابض دولت اسلامیہ اب افغانستان میں اپنے پاؤں جمانے کی کوشش کر رہی ہے۔

Facebook
Twitter
LinkedIn
Print
Email
WhatsApp

Never miss any important news. Subscribe to our newsletter.

آئی بی سی فیس بک پرفالو کریں

تجزیے و تبصرے