منگل : 05 مئی 2020 کی اہم عالمی خبریں

[pullquote]’نیو یارک ٹائمز‘ کے لیے تین پولٹزر پرائز[/pullquote]

امریکی اخبار’نیو یارک ٹائمز‘ کو تین مختلف شعبوں میں امسالہ پولٹزر انعام دینے کا اعلان کیا گیا ہے۔ پولٹزر پرائز کی انتظامیہ نے بتایا کہ اس روزنامے کو اس کی غیر ملکی رپورٹنگ، گراں قدر صحافتی چھان بین اور تبصروں پر اس انعام کا حقدار ٹھہرایا گیا ہے۔ فوٹو گرافی کا پولٹزر پرائز برطانوی خبر رساں ادارے’روئٹرز‘ کو ہانگ کانگ میں ہونے والے مظاہروں کی تصاویر پر دیا گیا اور امریکی ایجنسی اے پی کو اس متنازعہ کشمیر کے سفر کے دوران کھینچی گئی تصاویر پر دیا گیا۔ کورونا وائرس کے سبب اس مرتبہ ان انعامات کا اعلان لائیو اسٹریمنگ کے دوران کیا گیا۔

[pullquote]یورپی مرکزی بینک کا ریاستی بانڈز خریدنے کا منصوبہ غیر آئینی[/pullquote]

جرمنی کی وفاقی آئینی عدالت نے 2015ء سے جاری یورپی مرکزی بینک (ای زیڈ بی) کے اربوں یورو کے ریاستی بانڈز خریدنے کے منصوبے کے خلاف قانونی کارروائی کی اجازت دے دی ہے۔ ججوں کے مطابق مرکزی بینک کے فیصلے ناقص تھے اور برلن حکومت اور وفاقی پارلیمان نے اس کے خلاف کچھ نہ کرتے ہوئے بنیادی قانون کو توڑا ہے۔ اس دوران کورونا وائرس کے پھیلاؤ کے سبب اقتصادیات پر پڑنے والے منفی اثرات کوکم کرنے کے لیے یورپی مرکزی بینک کے ہنگامی پروگرام کو عدالتی فیصلے میں شامل نہیں کیا گیا۔

[pullquote]برطانیہ اور امریکا کے مابین تجارتی مذاکرات[/pullquote]

یورپی یونین سے علیحدگی کے بعد برطانوی حکومت پہلی مرتبہ امریکا کے ساتھ منگل کے دن سے باضابطہ تجارتی مذاکرات شروع کر رہی ہے۔ اس ٹیلی مذاکرات میں دونوں ممالک کی کوشش ہو گی کہ کووڈ انیس کی عالمی وبا سے نمٹتے ہوئے باہمی تجارتی تعلقات کو مزید بہتر بنانے کی کوشش کی جائے۔ ادھر امریکی حکومت دوسری سہ ماہی کے دوران اخراجات کی مد میں ریکارڈ تین ٹریلین ڈالر مستعار لینے کا ارادہ رکھتی ہے۔ کورونا وائرس کی وجہ سے ترتیب دیے گئے امدادی پروگراموں کی وجہ سے امریکی بجٹ بری طرح متاثر ہوا ہے۔ اس وقت امریکی حکومتی قرضہ تقریبا پچیس ٹریلین ڈالر تک پہنچ چکا ہے۔

[pullquote]نئے کورونا وائرس سے ہلاکتوں کی تعداد کوارٹر ملین سے متجاوز[/pullquote]

نئے کورونا وائرس کی وجہ سے ہلاک شدگان کی تعداد دو لاکھ چالیس ہزار کے قریب پہنچ گئی ہے۔ عالمی ادارہ صحت کے مطابق دنیا بھر میں اس وبا سے متاثرین کی تعداد تقریبا 35 لاکھ ہو چکی ہے۔ اسی اثنا کووڈ انیس کی وبا سے نمٹنے کی خاطر ویکسین بنانے کے لیے عالمی ڈونرز نے آٹھ بلین یورو فراہم کرنے کا عہد ظاہر کر دیا ہے۔ ادھر امریکی حکام نے خبردار کیا ہے کہ اس بیماری کی وجہ سے مزید ہلاکتیں ہونے کا سنگین خطرہ ہے، اس لیے امریکی عوام محتاط رہیں۔ امریکا میں اس بیماری کے باعث ہلاکتوں کی تعداد انہتر ہزار کے قریب پہنچ گئی ہے۔ اس عالمی وبا سے شدید ترین متاثرہ براعظم یورپ ہے، جہاں ایک لاکھ 45 ہزار افراد لقمہ اجل بن چکے ہیں۔

[pullquote]جرمن صوبے پابندیاں نرم کرنے کے لیے تیار، ذارئع[/pullquote]

جرمن صوبائی حکومتیں نئے کورونا وائرس کی وجہ سے عائد کردہ پابندیوں کو نرم کرنے پر رضا مند ہو جائیں گی۔ جرمن سفارتی ذرائع کے حوالے سے بتایا گیا ہے کہ بدھ کو جرمن چانسلر انگیلا میرکل اور صوبائی وزرائے اعلیٰ کے مابین ہونے والی ٹیلی کانفرنس میں کئی اہم فیصلے متوقع ہیں۔ روئٹرز نے بتایا ہے کہ وزرائے اعلیٰ متفق ہو چکے ہیں کہ گیارہ مئی سے بڑی دوکانوں کو بھی کھولنے کی اجازت دے دی جائے گی جبکہ سخت حفاظتی اقدامات کے تحت جرمن فٹ بال لیگ کو بحال کرنے کا فیصلہ بھی کر لیا جائے گا۔ ساتھ ہی صوبائی حکومتیں مرحلہ وار اسکولوں میں تعلیم کی بحالی اور آؤٹ ڈور کھیلوں کے لیے گراؤنڈ کھولنے کی اجازت بھی دے دی گی۔

[pullquote]گزشتہ برس انیس ملین بچے بے گھر ہوئے، بونیسیف[/pullquote]

اقوام متحدہ کے ادارہ برائے اطفال نے منگل کے دن بتایا ہے کہ گزشتہ برس کے دوران مسلح تنازعات اور تشدد کے باعث بے گھر ہونے والے بچوں کی تعداد تقریبا انیس ملین رہی۔ یونیسیف کے تازہ اعدادوشمار کے مطابق ان میں سے زیادہ تر بچے اپنے ہی ملک میں مہاجر بننے پر مجبور ہوئے ہیں۔ عالمی ادارے نے خبردار کیا ہے کہ بے گھر ہونے والے لاکھوں بچوں کو مناسب تحفظ فراہم نہیں کیا جا رہا ہے۔ بتایا گیا ہے کہ بالخصوص کووڈ انیس کی عالمی وبا کے دوران ان بچوں کو زیادہ خطرات لاحق ہیں۔ گزشتہ برس مجموعی طور پر بے گھر ہونے والے افراد کی تعداد 46 ملین بتائی گئی ہے۔

[pullquote]بھارتیوں کی وطن واپسی کا بڑا پروگرام[/pullquote]

بھارتی حکومت نے اپنے لاکھوں شہریوں کو وطن واپس لانے کی خاطر ایک وسیع تر آپریشن شروع کر دیا ہے۔ نئی دہلی حکومت نے بتایا ہے کہ ان شہریوں کی وطن واپسی کو ممکن بنانے کی خاطر طیاروں کے ساتھ ساتھ بحری جہازوں کا استعمال بھی کیا جائے گا۔ یہ بھارتی شہری کورونا لاک ڈاؤن کی وجہ سے بیرون ممالک میں محصور ہو کر رہ گئے ہیں۔ بھارت نے مارچ کے اواخر میں تمام بین الاقوامی پروازوں کی آمد پر پابندی عائد کر دی تھی۔ اس پروگرام کے تحت صرف خلیجی ممالک سے ہی 33 لاکھ بھارتیوں کو بحری جہازوں کے ذریعے واپس لایا جا رہا ہے۔

[pullquote]کووڈ انیس کی وبا جنگلی حیات کی مارکیٹ سے پھیلی، آسٹریلوی وزیرا عظم[/pullquote]

آسٹریلوی وزیر اعظم اسکاٹ موریسن نے کہا ہے کہ بہت زیادہ امکان ہے کہ چین میں کووڈ انیس کی وبا جنگلی حیات کی مارکیٹ سے پھیلی۔ منگل کے دن موریسن نے کہا کہ ایسے شواہد نہیں ملے کہ کینبرا حکومت اپنے اس موقف میں کوئی تبدیلی پیدا کرے۔ ادھر امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے گزشتہ ہفتے ہی کہا تھا کہ وہ پراعتماد ہیں کہ یہ وائرس چین کی وائرلوجی لیبارٹری سے پھیلا۔ امریکی وزیر خارجہ مائیکل پومپیو نے بھی ایسے ہی خیالات کا اظہار کیا ہے تاہم انہوں نے یہ نہیں کہا کہ اس وائرس کو پھیلانے میں چینی حکومت نے دانستہ کوشش کی۔ چین سے پھیلنے والا یہ وائرس تقریبا تمام دنیا کو اپنی لپیٹ میں لے چکا ہے۔

[pullquote]کووڈ انیس کی وجہ سے انڈونیشیا کی معیشت کو دھچکا[/pullquote]

نئے کورونا وائرس کی وجہ سے انڈونیشیا کی اقتصادیات کو شدید مشکلات کا سامنا ہے۔ منگل کے دن حکومت نے بتایا کہ رواں سال کی پہلی سہ ماہی کے دوران معیشت میں ترقی سن 2001 کے بعد اب تک کی سست ترین ہے۔ دیگر ممالک کی طرح اس وبا کے پھیلاؤ کو روکنے کی خاطر جنوب مشرقی ایشیا کی سب سے بڑی اقتصادی طاقت میں بھی لاک ڈاؤن جاری ہے۔ اس وجہ سے آبادی کے لحاظ سے سب سے بڑے مسلم ملک اںڈونیشیا میں سترہ لاکھ افراد بے روزگار بھی ہو چکے ہیں۔

[pullquote]بائیڈن اپنے نائب کے لیے سیاہ فام خاتون چنیں، ووٹرز کا اصرار[/pullquote]

امریکی صدارتی انتخابات کے لیے ڈیموکریٹ امیدوار جو بائیڈن پر زور دیا جا رہا ہے کہ وہ اپنے نائب کے لیے کسی سیاہ فام خاتون سیاستدان کا انتخاب کریں۔ بالخصوص ساؤتھ کیرولائنا میں ڈیموکریٹک پارٹی کے سیاہ فام ووٹ بینک کا اصرار ہے کہ اس مرتبہ نائب امریکی صدر کے لیے کسی ایفرو امریکی خاتون کو میدان میں اتارنا چاہیے۔ جو بائیڈن نے اپنے نائب کو چننے کا مرحلہ شروع کر رکھا ہے، جو جولائی کے اواخر میں مکمل ہو جائے گا۔ اس سال نومبر میں صدارتی انتخابات میں بائیڈن کا مقابلہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ سے ہو گا۔

[pullquote]یوروپین سینٹرل بینک کا بانڈز پروگرام، جرمن عدالت کا فیصلہ آج متوقع[/pullquote]

اعلیٰ جرمن عدالت منگل کے دن فیصلہ سنا رہی ہے کہ یوروپین سینٹرل بینک کی طرف سے بانڈز خریدنے کا وسیع تر پروگرام جرمن آئین کے تحت قانونی ہے یا نہیں۔ جرمنی وفاقی آئینی عدالت نے سن دو ہزار سترہ میں بانڈز خریدنے کے ایک پروگرام پر تحفظات کا اظہار کیا تھا۔ جرمن عدالت اگر ’پبلک سیکٹر پرچیس پروگرام‘ کو ملکی قوانین کے برخلاف قرار دیتی ہے تو جرمن مرکزی بینک کو اس پروگرام میں شمولیت سے روک دیا جائے گا۔

[pullquote]امریکی استانی مصر سے رہا، واپس وطن پہنچ گئیں[/pullquote]

مصر میں ایک سال تک جیل میں قید رہنے والی امریکی سکول ٹیچر کو رہا کر دیا گیا ہے۔ اسٹیٹ ڈیپارٹمنٹ نے بتایا ہے کہ مصری نژاد امریکی شہری ریم ڈیسکوکی واپس امریکا پہنچ چکی ہیں۔ 47 سالہ ریم سنگل مدر ہیں اور انہیں بغیر کسی عدالتی کارروائی کے تقریبا ایک سال تک مصری جیل میں قید رکھا گیا۔ ان پر الزام تھا کہ وہ ایک ایسا فیس بک پیچ چلا رہی تھیں، جو مصری حکومت پر تنقید کرتا تھا۔ ریم کو جولائی سن دو ہزار نو میں قاہرہ ایئر پورٹ پہنچنے پر ان کے ٹین ایجر بیٹے کے ہمراہ ہی حراست میں لے لیا گیا تھا۔ انسانی حقوق کے کارکنان نے اس گرفتاری کو شدید تنقید کا نشانہ بنایا تھا۔

Facebook
Twitter
LinkedIn
Print
Email
WhatsApp

Never miss any important news. Subscribe to our newsletter.

مزید تحاریر

آئی بی سی فیس بک پرفالو کریں

تجزیے و تبصرے